سنا رہی ہیں

یہ کس کے خوابوں کی کرچیاں ہیں جو فسردہ قصے سنا رہی ہیں
یہ کس کے ٹوٹے دلوں پہ رقصاں بہاریں دکھڑے سنا رہی ہیں

میرے وطن کی اداس شامیں وہ نوحہ کرتے اجاڑ منظر
کسی شکستہ دل مسافر کی آج کتہا سنا رہی ہیں

نہ آرزو وصال ہے نہ غم فراق ہے جاں گسل
شہر ویراں کی حسرتیں یہ کچھ اور نغمے سنا رہی ہیں

جو چلے تو رستے ہی کھو دئیے جو ملے تو پھر سے گنواں دیئے
وہ تھکی ہوئی سی مساوتیں بھی زوال ہستی سنا رہی ہیں

وہ جو رازدان حیات تھے وہ جو ہمسفر میرے ساتھ
انہیں چھوڑ کر کسی دشت میں یہ ہوایں بدلے سنا رہی ہیں

Ye kisky khuwabon ki kirchiyan hain jo fasurda qissy suna rahi hain
Ye kisky tooty dilon pe raqsan baharain dukhry suna rahi hain

Mery watan ki udas shamain, wo noha karty ujar manzar
Kisi shikasta dil e musafir ki aj katha suna rahi hain

Na arzo e wisal hy na ghum e firaq hy  jan ghusal
Shehar e veeran ki hasratain ye kuch aur naghme suna rahi hain

Jo chaly tu rasty hi kho diye, jo mily tu phir sy gawa diye
Wo thaki hoi si musafitain bhi zawal e hasti suna rahi hain

Wo jo razdan e hayaat thy, wo jo humsafar mery sath thy
Unhy chor kar kisi dasht main, ye hawain badlay suna rahi hain

غزل

اٹھا تھا کاروان دل لیے رخط سفر لیکن
وہ ایسے حادثے گزرے رہا نہ پھر سفر ممکن

پھرے در در لیے تھامے تمنا ہائے دل اپنی
وہیں ٹوٹا یقیں اپنا جہاں پہ آس تھی اتنی

چلے جائیں جو محفل میں تماشہ دیکھنے اپنا
تو پھر مشکل سنمبھلتا ہے یہ بیچارہ دل اپنا

گو رستے سامنے پر نظر میں اک نہیں اپنے
تو پھر کس کے سہارے چل دیے لے کر سبھی سپنے

یقیں کی آخری منزل پہ گویا انتہا ہوگی
اب اپنی زندگی جس موڑ پہ بھی الوداع ہوگی

Utha tha karwan e dil liye rakht e safar lekin
Wo aisy had’say guzry raha na phir safar mumkin

Phiry dar dar liye hatho’n main tamana hai e dil apni
Woheen tota yaqeen apna jahan pe aas thi itni

Chaly jain jo mehfil main tamsha dekhny apna
Tu phir mushkil sambhlta hy ratoon ko ye dil apna

Go rasty samny hain par nazar main ik nahi apny
Tu phir kis ky sahary chal diye lay kar sabhi sapny

Yaqeen ki akhri manzil pe goya inteha hogi
Ab apni zindagi jis mour par bhi alvida hogi