ہم

اندھیرے راستوں پر بٹھکتے پھر رہے ہیں ہم

نہ منزل سامنے نہ ہمسفر، تنہا کھڑے ہیں ہم

کہاں تک خاک چھانیں ہم کہیں تو اب بسیرا ہو

فقط دوری بڑھی ہے اور بھی جتنا چلے ہیں ہم

کبھی گلشن میں ہولے سے دبے پاوں چلے جائیں

اداسی اوڑھ لیتے ہیں بہت ہی دل جلے ہیں ہم

نہیں روکا کسی کو بھی جو آکے جانا چاہتا ہو

نہیں ملتا کوئی بھی جسے اپنا کہیں ہیں ہم

کسی افسردہ غنچے کی طرح غمگین ہے یہ دل

بہت ٹوٹا کیے ہے یہ بہت جوڑا کیے ہیں ہم

For non-Urdu readers.

Andheray rasto’n par bhatak’ty phir rahay hain hum// na manzil samny, na humsafar, tan’ha khar’y hain hum

Kahan tak khak chanai’n hum, kahee’n tu ab basair’a ho// faqat dour’i bar’hi hay aur bhi jitna chalay hain hum

Kabhi gulshan main hola’y say dabay pao’n chaly jai’n// udaasi aur’h lety hain buhat hi dil jalay hain hum

Nahi’n roka kisi ko bhi jo aky jana chah’ta ho// nahi milta koi bhi jesy apna kahai’n hain hum

Kisi afsurdah gunchy ki tar’han gamgeen hain ye dil// buhat toota kiye hai ye buhat jora kiye hain hum