سفر نامہ : لاہور میں بیتی ایک رات 

لاہور اور میرا تعلق چند گھنٹوں پہ ہی محیط ہوتا ہے. کسی نہ کسی کام کا بہانہ واپس انہیں گلیوں اور بازاروں میں لے آتا ہے جہاں سے واپسی مشکل ہوجاتی ہے. پھر چاہیں آپ ہزار کوشش کر لیں لاہور کا ناسٹلجیا آپ کی جان نہیں چھوڑتا.

سارے سفر میں ہمارے سر پہ رہنے والے سورج نے لاہور پہنچتے ہی ہم سے منہ موڑ لیا تھا. بھلا سورج سے زیادہ اپنے غروب ہونے کی جلدی کسے ہوتی ہے؟ مگر یہ ایک نیا لاہور تھا جو میری آنکھوں کے سامنے رات کی چادر اوڑھے ہوئے تھا.

ابھی لاہور پہنچے کچھ ہی پل ہوئے تھے کہ لاہور نے اپنے ہونے کا احساس دلانا شروع کر دیا تھا. وہ مناظر مجبور کر رہے تھے کے میں اپنی تمام تر مصروفیات ترک کرکے بس انہیں ہی دیکھوں . یہی لاہور سے گلہ ہے وہ آپکو مجبور کرتا ہے کہ بس اسے تکتے رہیں. اس کے پرانے بازاروں کو اس کی ویران گلیوں کو، اس کی ہزار ہا سال سے کھڑی سینکڑوں راز چھپائے ان عمارتوں کو جو آپ سے بس آپکا وقت مانگتی ہیں. آپکی توجہ مانگتی. اور میرے پاس وقت ہی تو نہیں تھا.

پرانی انارکلی میں گاڑی کی رفتار خودہی آہستہ ہوگئی تھی. جیسے کہہ رہی ہو کہ اس کا عروج تو دیکھ نہیں سکے زوال کا عروج ہی دیکھلو. دیکھو ان چوباروں کو جو آج بھی دلوں میں کھلبلی مچا دیتے ہیں. وہ وہیں تھے آج بھی. ان کی حالت انکی داستان غم سنانے کےلیے کافی تھی . اندھیروں میں ڈوبے ہوئے مگر ایسا ہمیشہ سے تو نہیں ہوگا ایک زمانے میں وہ بھی روشن ہونگے. روشن تو خیر اب بھی تھے. لوگوں کا رش شائد پہلے سے بھی زیادہ ہوگیا تھا. مختلف ریسٹورنٹ جو کھل گئے تھے. ایسے کہ گویا پورا شہر ہی وہاں دیسی پکوان کا مزہ اڑا رہا ہو. مگر وہ ہماری منزل نہ تھی. سو بس خاموشی سے گزرتے چلے گئے.

لاہور کی سڑکیں سست پڑ رہی تھیں. خاموشی آہستہ آہستہ لاہور کو گھیر رہی تھی. مگر داتا دربار کا منظر کچھ اور ہی دکھا رہا تھا. وہاں زندگی پوری آب وتاب سے روشن تھی. ہجوم تھا جو دربار کے دہانے پہ بیٹھا تھا. سنا ہے دربار رات کو لوگوں کی بھیڑ سے بھر جاتا ہے. یہ بھی سنا ہے کہ رات آپ کے رازوں کو ڈھانپ لیتی ہے. دربار کی رات بھی ایسی ہی تھی. اعتبار سے بھری ہوئی.

کچھ دیر مزید چلے تو سامنے مینار پاکستان نہایت ادب سے کھڑا تھا. اندھیرے میں روشن مینار کی لائٹس اسے خوبصورت ترین شاہکار دکھا رہی تھیں. مگر وہ تو میری محدود سوچ تھی. ادھر بادشاہی مسجد اپنی تمام تر راعئنائی کے ساتھ میری توجہ کھینچنے میں کامیاب ہوگئی تھی. وہ میری سامنے تھی. جسے میں نے ہمیشہ تصاویر میں یا پھر بہت دور سے دیکھا تھا. وہ میرے سامنے تھی. کوئی ایسا جادوئی طلسم تھا جو احاطہ کئے ہوئے تھا. جو نظر کو بھٹکنے نہیں دیتا تھا. مگر وہ میری منزل نہیں تھی.

میری منزل لاہور فوڈ اسٹریٹ تھی. جسے پہلے بس انسٹاگرام میں ہی دیکھا تھا. موڈ کھلے آسمان تلے دیسی کھانے کا ہوا تو رخ حویلی کی طرف کیا اور تھوڑے نخرے دکھانے کے بعد تیسری منزل پہ جگہ مل ہی گئی تھی. مگر اب کھانا کھانا مشکل تھا. اب کی بار بادشاہی مسجد میرے نیچے تھی. میں ایک ایک گنبد، ایک ایک کونے کو آنکھیں پھاڑے دیکھ رہی تھی. وہ تھی ہی اتنی خوبصورت. اسکے صحن میں پھیلی پیلی روشنائی رات کو ایک نیا حسن دے رہی تھی. وہ کسی جادو کی نگری سے کم نہ تھی.

ایک بج رہا تھا مگر لاہور میں زندگی اب بھی رواں دواں تھی. مگر رفتار آہستہ تھی. ایک خاموشی تھی جو کاٹ رہی تھی. اگلی منزل ائیرپورٹ تھا. وہ بھی عجیب جگہ تھی. کوئی بچھرنے والے تھے تو کوئی ملنے والے تھے. کوئی اداسی سے خاموش تھا تو کوئی مارے جذبات کے قہقہے لگا رہا تھا. وہاں دو زندگیاں تو تھیں مگر زندگی میں توازن تھا.

تین بجے ہماری واپسی کا سفر شروع ہوا. اب کے لاہور خاصا ویران تھا. روشنیاں مدھم ہو چکی تھیں. راستہ بٹھکنے کی صورت میں کوئی بتانے والا بھی نہ تھا. تھے تو بس سڑک کنارہ سوئے ہوئے لوگ. یہ منظر میرے لیئے نیا نہیں تھا. نیا تو وہ سوال بھی نہیں تھا جو ہمیشہ فٹ پاتھ پہ سوئے لوگوں کو دیکھ کر ابھرتا ہے. اتنے شور میں کوئی کیسے سو سکتا ہے؟ یا شائید اندر کا شور اس سے بھی زیادہ ہوتا ہے کہ باہر والا کچھ اثر نہیں کرتا.

چند گھنٹے لاہور کے آنگن میں گزارنے کے بعد معلوم ہو چکا تھا کہ لاہور کی راتیں واقعی بہت خوبصورت ہوتی ہیں. ایسا لطف دیتی ہیں کہ زندگی کی قیمت پوری ہوجاتی ہے. احسن سعید نے ایک بار کہا تھا ” آدھی رات کا لاہور پوری زندگی یاد رہتا ہے” غلط نہیں کہا تھا.

#travelogue #lahore #traveling

#peopleofmyland #merylog

Advertisements

Hope

And when doors are closed 

And light fades away

And when silent screams

Of the heart tremble

For what was left

Is all lost.

There,

My dear,

In the blurred vision

Of your dismay

A door awaits

For you to enter

Where lies the peace

Your heart beseech 

#poem #words #wordcraft #wordart #freeverse #poetry #art 

Struggle

And look at the sky

At night 

Bringing sparkles 

From a far away land 

The tiny ones 

Attracting the eyes

With enchanting glows

For who could have imagined

Deep down 

What twinkle above 

Are the souls; broken

And the hearts; wretched

Struggling to survive 

At their worst. 

#poem #words #wordplay #wordcraft #freeverse #night #stars #hope #believe #live #peace 

The world needs more creative thinkers. 

(Originally shared with The Voice Today) 

Right from the beginning, there’s a hierarchy of subjects in schools everywhere in the world where science is prefered over arts and languages. Arts is never taken seriously in schools and it is often considered ‘a waste of time’ by many qualified teachers. While I was in school in Pakistan, we only had art classes once a week which were cancelled quite often because the teacher was ‘absent’ and hence we always ended up doing math. 
The problem is not just how schools have shifted their focus on science but how the creative skills of students are being brutally killed. 
On top of that, students are taught in a way where there is no freedom to make mistakes or learn from them. Hence, this develops long term fear in students. Fear of being wronged. Fear of being judged. Fear of being compared with others. Fear of not being good enough. And then comes the social pressures…the questioning eyes asking for a justification for choosing a line of study other than science. 
Often, parents find it difficult to support their children. It’s not very common for artists to mention how proud their parents are of them for studying arts, music or literature. 
I myself studied science not beacuse I didn’t have other options but because science was the only option. I’m not against the science subject but creativity is equally important as science and should be treated in that way. 
The world needs more creative thinkers. Whether it’s poetry, literature, music or visual arts, these help in moulding one’s mind towards a positive direction. It enhances the cultural beauty to understand ourselves more independently. 
As humans, we all have some sort of creative light and it’s up to us whether we choose to let it shine or burn out. I strongly believed in Picasso’s saying “everyone is born an artist”. The problem is only to remain one. Lets not ignore creativity in the hustle and bustle of science. 
#art #crafts #science #literature #school #teachers #students #creative #creativethinking #education #pakistan #london #loveforallhatredfornone

بہت ہی بھاری یہ عید گزری

My thoughts on the recent turmoil in Pakistan.

ہے ٹوٹا پھوٹا سا شہر اب کے، اجاڑ بنجر چمن کی نگری
جو دن تھا روشن اندھیر ہے اب، بہت ہی بھاری یہ رات گزری

تھا شور برپا فضا میں ہر پل، پیام مہکے ہوئے تھے آتے

عجب سا اک واقعہ ہوا ہے،  صبا بھی اب کہ خاموش گزری

نکھر رہے تھے گلاب سارے، بہار آکر ٹھہر گئی تھی

ہے اجڑا اب کہ چمن یہ ایسا، خزاں بھی روتے ہوئے ہے گزری

کبھی تھی خوشیاں جہاں پہ رقصاں، موسموں میں نکھار سا تھا

وہیں قیامت ہوئی ہے برپا، وہیں سے رقصاں ہے موت گزری

ابھی تو مقتل بھی سرخرو تھا، ابھی تو لوٹے تھے ہم وہاں سے

ابھی بلاوہ ہے پھر سے آیا، بہت ہی بھاری یہ عید گزری

For non urdu readers:-

Hy toota phoota sa shehar abky, ujar banjar chaman ki nagri

Jo din tha roshan andhair hy ab, buhat hi bhari ye rat guzri

Tha shour barpa fiza main harpal, piyam mehky huay thy aty

Ajab sa ik waqea hua hy,  khizan bhi roty huay hy guzri

Kabhi thi khushiyan jahan pe raqsan, mosamon main nikhar sa tha

Waheen qayamat hoi hy barpa, waheen sy raqsan hy mout guzri

Abhi tu maqtal bhi surkhuro tha, abhi tu louty thy hum wahan sy

Abhi bulawa hy phir sy aya, buhat hi bhari ye eid guzri

We aint no weeds

While covering the Special School Carnival, I knew I was writing one sided story. A story humans love to read. A story celebrating the brighter side of life. That day I vowed to unveil the dark side too. I wanted to write a story which is often despised by humans for having an evil portrayal. A story staining the very word humanity. It took several months to gather what I wanted to convey and abashedly my words failed to do justice with my thoughts and I ended up with this piece of poetry. I said it earlier and I’ll say it again, hindrance is not their disabilities but our condescend behaviors. Whoever is reading it, I hope, I wish and I pray, understands the motive behind writing it.

edited1.jpg

I long for the day when you will accept
I belong to you but don’t get upset

Disability is nothing but a state of mind
That feeds your prejudice, makes you blind

“Imperfect!” Seems to your vision fam
For an enlightened heart special I am

A gift from the heavens with special needs
Differently beautiful, we aint no weeds

Shimmers a hope through my parents’ eyes
My contagious smile lit their lives

A single remark overshadows the warfare
The struggle, endeavor, hope and the prayer

Your time and love I need the most
Embrace the difference, be a patient host

___
#specialangels #specialkids #poem #poetry

#peopleofmyland #merylog

Ode to the children of a lesser god 

(Dedicating this poem particularly to Syrians suffering for the most trivial and mundane reasons, to my brothers and sisters in kashmir fighting for their freedom and generally to the children of a lesser god)

 I witnessed your sufferings

Your woes and your mournings 

• 

 Disputed lands and  shattered peace

 Tormented world, warmongers at ease 

Disowned and rejected, your fate is decided

Your land is invaded, the war is one sided


Fogive me my silence, I pardon to thee

The wretched heart has sent a plea 

Worthless words to console your loss

Helpless I am,  my speech, a remorse


The corpse you planted, will bloom bright 

Their souls will reach the majestic height


The wounds will heal, but the scars wont

The memories of loved ones are there to haunt


But  darker the night, brighter the day

Dont you lose hope in the illusionary dismay 


 Bestowed upon them are the blessings to cope

For those who steadfast holding the rope


He alone is sufficient, who watches over thee 

Thus we seek justice from no one but He 

#ode #Syria #Kashmir #Palestine #Burma #Pakistan #sufferings #persecutions #prayers #justice #wordswithoutboarders #poem 

#peopleofmyland #merylog

*Building Dreams*

Adrehma Nasir Elementary School was our destination that day. Started our mindful journey, we were planning the way to interact with the students. ‘Our questions may sound offensive’ was our main concern. Leaving everything on God as always, we prayed. When we reached there, the students were already waiting for us. It was silence all the way. Pin drop silence. A moment of shame for us.

 It was the days of December, the wintry days. Still the students were sitting in a distincful manner oblivious to the extreme cold weather. 

Refreshment was given to us, the formalities we were uncomfortable with. The protocol , the respect we were given was disturbing us. 

The school had its program for us including speeches in both the languages i.e in Urdu and in English.   

It stunned us all. The confidence, the fluency, the shrill voice notes, everything, everything was remarkable. After their program we introduced ourselves and chatted with the students, teachers and the principal of the school. A number of games were played. Later they showed us the school, 3 rooms and a veranda with a handpump for dinking water, a washroom and a small front yard. 

That was all. A school of 180 students with limited furniture, dimly lit rooms and an untold story. A story beyond our comprehension. A story worth our comprehension.

 It was originally a house that was donated by a lady of the same village. 

We were there to help them. Our emotions were the amalgamation of humility with a touch of haughtiness. The purpose of our visit was to have a glimpse of their poor condition ( it may sound offensive) and to raise funds for them. In reality, it was they who were giving us. One of the greatest lears to learn. 

The divine lessons of humbleness, greatfulness, meekness , gratitude, self-effacingness and above all, the lessons of life.

We are still unable to fathom how in such restricted resources they were filled with sheer euphoric attitudes. Their lives were full of ecstasy. Their shallow grins was the reason why we envy their laugh. Their faces were as fresh as the gusty wind of decembers’ evening. 

This jealousy quickly turned into a bottomless brim of shame. With a heartfelt weak smile, we managed to control the outburst of our emotions. To overcome our shame we handed them goodies as a jesture of love from our college. In return they gave us fresh sugarcanes. And we were chackmated,  yet again, but this time we accepted our defeat wholeheartedly.

Leaving after staying for more than two hours, our journey ended by visiting Hazrat Molvi Sher Ali sahib’s (ra) house and the mosque, revealing the glorious and sublime heritage of the village. 


#ASA #AVisitToAdrehma #School #Part1 #Humanity #serving #BuildingDreams #BuildingFuture #reformingschools 

#peopleofmyland #merylog

IT’S OUR FAILURE

Being a Pakistani has always been a losing game specially against the terrorism. Just when I started believing in my country, Pakistan was echoed by a series of horrendous attacks. One after the other, taking several innocent lives, sadly, the lives of lesser known humans. 

This new wave of terror is as new as the terrorism in the country. For a time being peace was established for point scoring, NAP was implemented, apparently though, yet the situation remains the same. 

But this isn’t the delimma. The way we react after every tragedy is the real or sometimes the worst tragedy. Glorifying the henious acts, blaming the victims has become a new normal now. Whether it be a shrine, the emblem of love, the epitome of peace or the persecution of Ahmdies, the justification is always there, ironically.

On the other hand, this intense perplexed situation is euphemized by media and politicians labeling the brutal attacks as coward attacks. But here is an unveiled truth. The truth we always neglected, intentionally, to comfort ourselves. 

And the truth is IT IS OUR FAILURE. We are responsible for these vicious attacks. It’s we who are not courageous enough to take a bold step against the enemy. Our mindset, our selective grievance and mourning is strengthening our enemy. Our silence is the oxygen they breathe. Our resilience is their reinforcement. The last time we united against the enemy was the APS massacre. We vowed not to forget and forgive our enemy. We promised to take the revenge of every drop of blood. But we forgot to do so. We always forget to do so. The APS massacre was enough to shaken ourselves from the deep ignorant sleep. But nothing happend. We failed in acheiving our goal. We failed to speak up when it was needed the most. 

Just for the sake of Pakistan, stop lying to yourself. Stop using clichéd, meaningless phrases. Stop acting like an ignorant. The battle against the terrorism is about to end and it’s we who are losing it. Stand now or regret it forever.  The choice is yours. 
#Pakistan #Terrorism #LahoreAttacks #Prayers  

محبت نہیں، عزت تو کر ہی سکتے ہیں.

پہاڑوں کے بعد اگر میں نے کسی سے عشق کی حد تک محبت کی تو وہ اردو زبان تھی. عشق تو پھر جان لیوا ہی ہوتا ہے چاہے پہاڑوں سے ہو یا اپنی زبان سے. اور پھر اگر محبوب روٹھ جائے تو یہ تکلیف ہر تکلیف سے بڑھ کر ہوتی ہے . پچھلے دو سال سے مولونا شیرازی کا قول جو مجھے ٹکٹکی باندھے حسرت کی نگاہ سے دیکھے جارہا ہے، کچھ یوں ہے “اردو کیا ہے؟ ایک کوٹھے کی طوائف ہے، مزہ ہر کوئی لیتا ہے محبت کم ہی کرتے ہیں”

اسے پڑھنے کے بعد مجھے احساس ہوا کہ میں اردو کی شیرینی سے تو لطف اندوز ہوئی ہوں، اس کی ذومعنی باتوں نے مجھے گھنٹوں اپنی اسیری میں بھی لئے رکھا ،اس کی چاشنی اور مٹھاس ابھی بھی اپنے جوبھن پر ہے، مگر محبت تو نہیں ہوئی.یہ احساس ندامت پہلے پسندیدگی میں بدلہ اور پھر دیکھتے ہی دیکھتے عشق ہو گیا.”مگر اپنی زبان سے تو سب ہی محبت کرتے ہیں. اس میں کونسی کمال کی بات ہے؟ ” لوگ کہتے ہیں.تو اس کیلیے میرا بھی وہی جواب ہوگا جو لیلی کی عام شکل و صورت پر کسی نے دیا تھا کہ لیلی کی خوبصورتی عام آنکھ سے نہیں بلکہ مجنوں کی آنکھ سے دیکھی جاتی ہے. اور پھر عشق کرنا اگر اپنے اختیار میں ہوتا  تو انجام جاننے کے باوجود کوئی نہ کرتا.

گزشتہ ایک لمبے عرصہ سے میں اردو کے بارہ میں لکھنا چاہتی تھی، اس کے ساتھ ہوئی زیادتی پہ معافی مانگنا چاہتی تھی، اس کی خستہ حالی پہ رونا چاہتی تھی اس کے ساتھ کیے جانے والے سلوک پہ افسوس کرنا چاہتی تھی مگر اردو تو مجھ سے روٹھی ہوئی تھی. الفاظ تھے کہ میرا ساتھ ہی نہیں دیتے تھے. قلم میں وہ تاثیر ہی نہ تھی. نہایت تگ و دو کرنے کے بعد کچھ کہنے کے قابل ہوئی تو جو لکھا وہ سامنے ہے.

وہ زبان جو ہماری شناخت ہے، جس کو بنیاد بنا کر ہم نے الگ ملک مانگا تھا. جس کو بولنے والے معززین کہلاتے تھے.جس کے ایک نخریلی محبوبہ کی طرح ناز اٹھائے جاتے تھے، اب نہ جانے کونسے چوراہوں پہ دھکے کھا رہی ہے. کہاں کہاں نہ جانے اسے دھتکارا گیاتھا. بہت سی جگہوں سے اسے ذلیل کر کے نکالا گیا تھا اور بہت سی جگہوں پہ ابھی رسوا ہونا باقی تھا.مگر اردو تو ہم سے روٹھ گئی نا.وہ جو کبھی ہمارا فخر تھی آج اس کو بولتے ہوئے کہیں نہ کہیں شرمندگی محسوس کرتے ہیں.کہنے والے کہتے ہیں کہ آپکی تاریخ، آپ کی ثقافت، آپ کا رہن سہن سب آپ کی زبان میں محفوظ ہوتے ہیں اور جب آپ کی زبان بولنے والےختم ہوجاتے ہیں آپ کی زبان بھی ختم ہوجاتی ہے.مگر کہنے والے تو ہمیشہ ہی کچھ نہ کچھ کہتے رہتے ہیں. سننے والے ابھی پیدا نہیں ہوئے.

میرے لکھنے کا ہرگز یہ مقصد نہیں کہ میں آپ سے یا آپ دوسروں  سے بہتر ہیں.  نہ میں یہ چاہتی ہوں کہ آپ زبردستی اس کو بولیں، اس سے محبت کریں یا اس سے عشق کریں. ہر گز نہیں. مگر میں اتنا ضرور چاہتی ہوں کہ کبھی نہ کبھی یہ آپ کی زبان ہی تھی. کبھی نہ کبھی اچھی تو لگی ہوگی.محبت نہ سہی عزت تو کر ہی سکتے ہیں؟ یقین کریں اردو زبان بھی ہم سے یہی توقع لگائے بیٹھی ہے کہ ہم شاید اس کا کھویا ہوا مقام دے ہی دیں.ورنہ اگر اس کے بس میں ہوتا تو یہ بھی ہماری طرح دھتکارے جانے کے بعد کبھی اپنی شکل نہ دکھاتی.اردو تو ہمیں اپنا مانتی ہے اب وقت ہے ہم بھی اسے اپنا مان لیں.