سنا رہی ہیں

یہ کس کے خوابوں کی کرچیاں ہیں جو فسردہ قصے سنا رہی ہیں
یہ کس کے ٹوٹے دلوں پہ رقصاں بہاریں دکھڑے سنا رہی ہیں

میرے وطن کی اداس شامیں وہ نوحہ کرتے اجاڑ منظر
کسی شکستہ دل مسافر کی آج کتہا سنا رہی ہیں

نہ آرزو وصال ہے نہ غم فراق ہے جاں گسل
شہر ویراں کی حسرتیں یہ کچھ اور نغمے سنا رہی ہیں

جو چلے تو رستے ہی کھو دئیے جو ملے تو پھر سے گنواں دیئے
وہ تھکی ہوئی سی مساوتیں بھی زوال ہستی سنا رہی ہیں

وہ جو رازدان حیات تھے وہ جو ہمسفر میرے ساتھ
انہیں چھوڑ کر کسی دشت میں یہ ہوایں بدلے سنا رہی ہیں

Ye kisky khuwabon ki kirchiyan hain jo fasurda qissy suna rahi hain
Ye kisky tooty dilon pe raqsan baharain dukhry suna rahi hain

Mery watan ki udas shamain, wo noha karty ujar manzar
Kisi shikasta dil e musafir ki aj katha suna rahi hain

Na arzo e wisal hy na ghum e firaq hy  jan ghusal
Shehar e veeran ki hasratain ye kuch aur naghme suna rahi hain

Jo chaly tu rasty hi kho diye, jo mily tu phir sy gawa diye
Wo thaki hoi si musafitain bhi zawal e hasti suna rahi hain

Wo jo razdan e hayaat thy, wo jo humsafar mery sath thy
Unhy chor kar kisi dasht main, ye hawain badlay suna rahi hain

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s