A broken song

The deafening silence on recent on going atrocities against Palestine is appalling. Freedom is a luxury they cant afford unless we stand with them. The tragedy of Gaza is more tragic than all the tragic plays of Greek, French and English literature and still cant be penned down for you need those alphabets those words that cant be said for they are too devastating, too destructive, too dreadful and too catastrophic. Trying to play my part via the only thing I think I am slightly good at.

A broken song.

Melancholic rhythms

Of sorrow and grief

Of death conjoined

With endless pain

Toll the knell

The city bleeds

Broken melodies

Of abandoned love

And tumultuous peace

Despaired ashes

Of tormented freedom

Lurk around

To mourn

To curse

The imposed silence

Of those who hear

Of those who see

Commiting a crime

Of sinful breed.

#Gaza #Genocide

کیا عجب ہے خدایا کہ تو چپ رہا

اب تو نوحہ بھی لکھتے قلم رک گئے

اب تو لفظوں کے معنے بھی ہسنے لگے

ظلم کی حد کی بھی کوئی حد ہے مگر

اب تو ذنداں کے دکھ حد سے بڑھنے لگے

پر یہ ٹوٹا ہوا سانس چلتا رہا

کیا عجب ہے خدایا کہ تو چپ رہا…

اور لوگوں کی چیخیں بلند ہوگئیں

خون پھر شہر یاراں میں بہتا رہا

ماں تڑپتی رہی غم کو سہتی رہی

باپ کی آنکھ پانی ٹپکتی رہی

ہر گلی میں ماتم تھا جاری رہا

کیا عجب ہے خدایا کہ تو چپ رہا…

کچرا کنڈی سے لاشیں نکلتی رہیں

تیری ہوا کی بیٹی سسکتی رہی

ہر گھڑی کو تڑپتی بلکتی رہی

اور برپا قیامت تھی ہوتی رہی

ظلم دھڑتی پہ کب سے یہ ہوتا رہا

کیا عجب ہے خدایا کہ تو چپ رہا….

میرے لوگوں کو چن چن کے مارا گیا

ان کا جینے کا حق ان سے چھینا گیا

ان کے گھر بار و دل کو جلایا گیا

دیس سے ان کو ان کے نکالا گیا

تیرے مذہب کی خاطر یہ ہوتا رہا

کیا عجب ہے خدایا کہ تو چپ رہا…

یہ وطن ہے کہ ذنداں کی تاریکیاں

لب پہ پابندیاں پاوں زنجیریاں

ایک اپنے نصیبوں میں سب آگیا

شہر جاناں اور اس کی یہ ہمجھولیاں

ان کی تحقیر پر دل یہ کٹتا رہا

کیا عجب ہے خدایا کہ تو چپ رہا..

The city, after all, still breathes.

Before the twilight of dawn

Till the late hours of dusk

Terror reigns

On empty roads

And bruised souls

Of beleagured city,

The war torn Quetta.

The rebellious sky

And treacherous hills

Supress the cries

And silence the screams

A thousand deaths

To the lost city

A tale unheard

Burried too deep

And doomed to bleed.

Amid the turmoil

Of decade’s suffering

And inflicted mourning

Under the blanket of grief

And limitless pain

The city after all

Still breathes.