نظم

سنا ہے مقتل بھی سرخرو ہے سنا ہے قاتل بھی باوضو ہے

سنا ہے اپنے وطن میں اب کہ لہو کا پیاسہ ہوا عدو ہے

وہی ہیں منصف وہی گواہ ہیں وہی ستمگر ہیں میر محفل

وہی ہیں زندان کے محافظ وہی ہیں زندہ رتوں کے قاتل

عجیب رسم و رواج ہے اب وطن میں جینا محال ہے اب

زباں بریدہ ہے آنکھ پرنم، سانس لینا دشوار ہے اب

کسے پکاریں کہاں چلائیں، کوئی خدارا ادھر بھی دیکھے

زمیں تماشہ بنی ہوئی ہے زمیں پہ بستے خدا بھی دیکھے

یہ چند آہیں ہیں اپنا زیور فقط یہ آنسو نصیب میں ہیں

یہی ملا ہے وطن سے اپنے، یہ شہر یاراں کی دولتیں ہیں

For non Urdu readers.

Suna hy maqtal bhi surkhuro hy, suna hy qatil bhi bawudhu hy

Suna hy aony watan main abky, lahu ka piyasa hua ado hy

Wohi hain munsif, wohi gawah hain wohi sitamgar hain meer e mehfil

Wohi hain zindan ky muhafiz wohi hain zinda rotu ky qatil

Ajeeb rasm o rawaj hy ab watan main jeena muhal hy ab

Zubaan bureeda hy ankh purnam, sans lena dushwar hy ab

Kisi pukarain kahan chal’lain, koi khudara idhr bhi dekhy

Zameen tamasha bani hoi hy zamee pe basty khuda bhi dekhy

Ye chand ahain hain apna zeewar, faqat ye anso naseeb main hain

Yehi mila hy watan sy apny, ye shehr e jana ki dol’tain hain

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s