ایدھی 

(If only I knew the art of poetry, I would have written a great poem to meet the greatness of Edhi sb. )

اندھیر رتیاں مٹاتا ایدھی

سحر زمیں پہ بساتا ایدھی

اداس لمحوں کو روند کر

خوشی لبوں پہ تھا لاتا ایدھی

غریب پرور تھا بندہ ایدھی

کفیل کتنوں کا خود تھا ایدھی

پھٹا پرانا تھا جوڑا اس کا

خدا کا بندہ عجیب ایدھی

گلے لگاتا تھا ان کو ایدھی

دلوں میں ان کو بساتا ایدھی

زمانہ پھیرے ہے منہ جن سے

انہی کو اپنا بناتا ایدھی

سڑک پہ بیٹھا بھی دیکھا ایدھی

سوالی بنتا بھی دیکھا ایدھی

تپتی دھوپوں میں پیڑ جیسا

سایہ کرتا بھی دیکھا ایدھی

دکھے ہووں کی دوا تھا ایدھی

مسیحا ٹوٹے دلوں کا ایدھی

فقط یہ کہنا ہی رہ گیا ہے

محبتوں کی دعا تھا ایدھی

#poetry #poem #Urdu #Edhi #Philanthropist #Peace #love #humanity #humanityfirst 

#PeopleOfMyLand #MeryLog 

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s