بہت ہی بھاری یہ عید گزری

My thoughts on the recent turmoil in Pakistan. 

ہے ٹوٹا پھوٹا سا شہر اب کے، اجاڑ بنجر چمن کی نگری
جو دن تھا روشن اندھیر ہے اب، بہت ہی بھاری یہ رات گزری 

تھا شور برپا فضا میں ہر پل، پیام مہکے ہوئے تھے آتے

عجب سا اک واقعہ ہوا ہے،  صبا بھی اب کہ خاموش گزری

نکھر رہے تھے گلاب سارے، بہار آکر ٹھہر گئی تھی

ہے اجڑا اب کہ چمن یہ ایسا، خزاں بھی روتے ہوئے ہے گزری 

کبھی تھی خوشیاں جہاں پہ رقصاں، موسموں میں نکھار سا تھا 

وہیں قیامت ہوئی ہے برپا، وہیں سے رقصاں ہے موت گزری

ابھی تو مقتل بھی سرخرو تھا، ابھی تو لوٹے تھے ہم وہاں سے

ابھی بلاوہ ہے پھر سے آیا، بہت ہی بھاری یہ عید گزری

For non urdu readers:- 

Hy toota phoota sa shehar abky, ujar banjar chaman ki nagri

Jo din tha roshan andhair hy ab, buhat hi bhari ye rat guzri

Tha shour barpa fiza main harpal, piyam mehky huay thy aty

Ajab sa ik waqea hua hy,  khizan bhi roty huay hy guzri 

Kabhi thi khushiyan jahan pe raqsan, mosamon main nikhar sa tha

Waheen qayamat hoi hy barpa, waheen sy raqsan hy mout guzri

Abhi tu maqtal bhi surkhuro tha, abhi tu louty thy hum wahan sy

Abhi bulawa hy phir sy aya, buhat hi bhari ye eid guzri