کتنی خاموش محبت کی زباں ہوتی ہے 

دل کی حالت ہے کہ چہرے سے عیاں ہوتی ہے 

کتنی خاموش محبت کی زباں ہوتی ہے 

تم کبھی غور سے سننا دیوانوں کو 

ان کی خامشی بھی درد  کا بیاں ہوتی ہے 

گھڑی دو گھڑی کو وہ رکے ہونگے 

شہر بھر میں یونہی آہ و فغاں ہوتی ہے 

کب تلک ساتھ وہ دیتے میرا 

کب تلک ساتھ بہاروں کے خزاں ہوتی ہے؟  

راہ تکتے ہوئے ہم بھی تھے بیٹھے رہے

خیر! اب ان سے یہ عنایت ہی کہاں ہوتی ہے 

مقتلِ عشق میں رہ کر بھی تبسم لب پہ

اب محبت کی وہ توقیر کہاں ہوتی ہے 

For non urdu readers.

Dil ki halat hy keh chehray sy bayan hoti hy

Kitni khamoosh muhabbat ki zuban hoti hy

Tum kabhi gour sy sun’na dewaanon ko

Inki khamoshi bhi dard ka bayan hoti hy

Ghari do ghari wo rukay hongy

Shehar bhar main yunhi aah o fygan hoti hy

Kab talak sath wo dety mera

Kab talak sath baharon ky khizan hoti hy? 

Rah takty huay hum bhi thay bethy huay

Khair, ab unsy ye anayat hi kahan hoti hy

Maqtal e ishq main reh kar bhi tabassum lab pe

Ab muhabbat ki wo touqeer kahan hoti hy? 

(اس سال کالج میں مشاعرے کیلیے دیے گئے مصرعے “کتنی خاموش محبت کی زباں ہوتی ہے” پر لکھنے کی ایک ناکام کوشش). شاعر کی روح سے معزرت

Advertisements

3 thoughts on “کتنی خاموش محبت کی زباں ہوتی ہے ”

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s