“ورنہ کچھ تنگ سی گلیاں بھی ہیں بازار کے ساتھ”

کیسے گزرے گی اس اجنبی غمخوار کے ساتھ

جب بھی ملتا ہے تو ملتا ہے وہ اغیار کے ساتھ 

باغ میں گل بھی تھے اور رنگ بھی نکھرے تھے

پھر بھی ہم بیٹھے رہے ویران سی دیوار کے ساتھ


دل یہ چاہتا ہے کہ اک نظرِ کرم ہو اب تو 

نظرِ کرم وہ بھی جو ہو پیار کے ساتھ 


یہی الفت کا مزہ ہے کہ رہو ہجر میں یارو 

کون کرتا ہے وفا اب….  وفادار کے ساتھ 


ہم دیوانوں کے دیاروں میں بھلا کون آئے؟ 

ورنہ کچھ تنگ سی گلیاں بھی ہیں بازار کے ساتھ

For non urdu readers. 

Kesy guzry gu us ajnabi gumkhuwar ky sath

Jab bhi milta hy tu multa hy wo agyaar key sath

Baag main gul bhi thy aur rang bhi nikhray thy

Phir bhi hum bethy rahy weeran si deewar key sath

Dil ye chahta hy ky nazar e karam ho ab tu

Nazar e karam wo bhi keh jo ho piyar key sath

Yehi ulfat ka maza hy keh raho hijr main yaro

Kon karta hy wafa ab wafadar key sath

Hum deewanon key diyaron main bhala kon aye? 

Warna kuch tang si galiyan bhi hain bharay key sath

(گزشتہ سال  کالج کے مشاعرے میں دیے گئے مصرعے “ورنہ کچھ تنگ سی گلیاں بھی ہیں دیوار کے ساتھ” پر کہی گئی ایک غزل) 

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s