مخالفینِ احمدیت کے نام

جو لکھنا چاہوں تو لکھ ہی ڈالوں سوال سارے جواب سارے

تمہی پشیمان ہوگے یارو، جو کھول دوں میں حساب سارے 

نکال پھینکا ہے ہم کو ایسے کہ جیسے اپنی زمیں نہیں ہے

یہ شہر اپنا نہیں ہے ہرگز نہ لوگ اپنے نہ گھر ہمارے 

دلوں میں نفرت رہی ہمیشہ، ہماری الفت  حقیر تھی کیا؟ 

بس ایک حسرت ہے اپنےاندر کبھی لگو تم گلے ہمارے 

نکال دیکھو صدی کو پچھلی، خودی بتاؤ یہ کیا ہوا ہے بلندیوں کو ہیں چھو رہے ہم، مگر کھڑے تم گڑھے کنارے

تمہاری گلیاں اندھیر نگری، ہمارے شہروں میں روشنی ہے 

جہاں پہ تم تھےوہیں کھڑے ہو مگر رواں ہیں قدم ہمارے 

تمہی تھے منصف، تمہی گواہ تھے تمہی نے تھا فیصلہ سنایا

مگر ہمارا خدا ہوا تھا, اسی نے بگڑے سبھی کام سنوارے

وفا کی مشعل جلائی ہم نے لہو سے اپنے جنوں سے اپنے 

چلیں ہیں مقتل میں سر اٹھا کر بزرگ بچے جواں ہمارے

وہ زخم دے کر سمجھ رہا تھا شکست کھائی ہے ہم نے، لیکن 

یہ زخم اپنے بھرے ہیں ایسے کہ کھل اٹھے ہیں گلاب سارے 


#Ahmadiyyat #Thoughts #UruPoetry

#peopleofmyland #merylog

Advertisements

کتنی خاموش محبت کی زباں ہوتی ہے 

دل کی حالت ہے کہ چہرے سے عیاں ہوتی ہے 

کتنی خاموش محبت کی زباں ہوتی ہے 

تم کبھی غور سے سننا دیوانوں کو 

ان کی خامشی بھی درد  کا بیاں ہوتی ہے 

گھڑی دو گھڑی کو وہ رکے ہونگے 

شہر بھر میں یونہی آہ و فغاں ہوتی ہے 

کب تلک ساتھ وہ دیتے میرا 

کب تلک ساتھ بہاروں کے خزاں ہوتی ہے؟  

راہ تکتے ہوئے ہم بھی تھے بیٹھے رہے

خیر! اب ان سے یہ عنایت ہی کہاں ہوتی ہے 

مقتلِ عشق میں رہ کر بھی تبسم لب پہ

اب محبت کی وہ توقیر کہاں ہوتی ہے 

For non urdu readers.

Dil ki halat hy keh chehray sy bayan hoti hy

Kitni khamoosh muhabbat ki zuban hoti hy

Tum kabhi gour sy sun’na dewaanon ko

Inki khamoshi bhi dard ka bayan hoti hy

Ghari do ghari wo rukay hongy

Shehar bhar main yunhi aah o fygan hoti hy

Kab talak sath wo dety mera

Kab talak sath baharon ky khizan hoti hy? 

Rah takty huay hum bhi thay bethy huay

Khair, ab unsy ye anayat hi kahan hoti hy

Maqtal e ishq main reh kar bhi tabassum lab pe

Ab muhabbat ki wo touqeer kahan hoti hy? 

(اس سال کالج میں مشاعرے کیلیے دیے گئے مصرعے “کتنی خاموش محبت کی زباں ہوتی ہے” پر لکھنے کی ایک ناکام کوشش). شاعر کی روح سے معزرت

“ورنہ کچھ تنگ سی گلیاں بھی ہیں بازار کے ساتھ”

کیسے گزرے گی اس اجنبی غمخوار کے ساتھ

جب بھی ملتا ہے تو ملتا ہے وہ اغیار کے ساتھ 

باغ میں گل بھی تھے اور رنگ بھی نکھرے تھے

پھر بھی ہم بیٹھے رہے ویران سی دیوار کے ساتھ


دل یہ چاہتا ہے کہ اک نظرِ کرم ہو اب تو 

نظرِ کرم وہ بھی جو ہو پیار کے ساتھ 


یہی الفت کا مزہ ہے کہ رہو ہجر میں یارو 

کون کرتا ہے وفا اب….  وفادار کے ساتھ 


ہم دیوانوں کے دیاروں میں بھلا کون آئے؟ 

ورنہ کچھ تنگ سی گلیاں بھی ہیں بازار کے ساتھ

For non urdu readers. 

Kesy guzry gu us ajnabi gumkhuwar ky sath

Jab bhi milta hy tu multa hy wo agyaar key sath

Baag main gul bhi thy aur rang bhi nikhray thy

Phir bhi hum bethy rahy weeran si deewar key sath

Dil ye chahta hy ky nazar e karam ho ab tu

Nazar e karam wo bhi keh jo ho piyar key sath

Yehi ulfat ka maza hy keh raho hijr main yaro

Kon karta hy wafa ab wafadar key sath

Hum deewanon key diyaron main bhala kon aye? 

Warna kuch tang si galiyan bhi hain bharay key sath

(گزشتہ سال  کالج کے مشاعرے میں دیے گئے مصرعے “ورنہ کچھ تنگ سی گلیاں بھی ہیں دیوار کے ساتھ” پر کہی گئی ایک غزل)