I wonder why..

By the river of solitude

Amidst the turmoil

Under the orchard of grief

I wonder why

The tortured silence

In the country, reigns

I wonder why the hate rules

And terror roams

I wonder why the sky loses

the hues and freshness at dawn

At dusk it faints and pines for love

Why the night is afraid

Of its own darkness

And screams aloud

With the stars above

I wonder why..

The birds no longer

Long to fly

And sing the elegies

To the lost love

I wonder why..

#poem #poetry #words #wordcraft

Advertisements

A broken song

The deafening silence on recent on going atrocities against Palestine is appalling. Freedom is a luxury they cant afford unless we stand with them. The tragedy of Gaza is more tragic than all the tragic plays of Greek, French and English literature and still cant be penned down for you need those alphabets those words that cant be said for they are too devastating, too destructive, too dreadful and too catastrophic. Trying to play my part via the only thing I think I am slightly good at.

A broken song.

Melancholic rhythms

Of sorrow and grief

Of death conjoined

With endless pain

Toll the knell

The city bleeds

Broken melodies

Of abandoned love

And tumultuous peace

Despaired ashes

Of tormented freedom

Lurk around

To mourn

To curse

The imposed silence

Of those who hear

Of those who see

Commiting a crime

Of sinful breed.

#Gaza #Genocide

کیا عجب ہے خدایا کہ تو چپ رہا

اب تو نوحہ بھی لکھتے قلم رک گئے

اب تو لفظوں کے معنے بھی ہسنے لگے

ظلم کی حد کی بھی کوئی حد ہے مگر

اب تو ذنداں کے دکھ حد سے بڑھنے لگے

پر یہ ٹوٹا ہوا سانس چلتا رہا

کیا عجب ہے خدایا کہ تو چپ رہا…

اور لوگوں کی چیخیں بلند ہوگئیں

خون پھر شہر یاراں میں بہتا رہا

ماں تڑپتی رہی غم کو سہتی رہی

باپ کی آنکھ پانی ٹپکتی رہی

ہر گلی میں ماتم تھا جاری رہا

کیا عجب ہے خدایا کہ تو چپ رہا…

کچرا کنڈی سے لاشیں نکلتی رہیں

تیری ہوا کی بیٹی سسکتی رہی

ہر گھڑی کو تڑپتی بلکتی رہی

اور برپا قیامت تھی ہوتی رہی

ظلم دھڑتی پہ کب سے یہ ہوتا رہا

کیا عجب ہے جدایا کہ تو چپ رہا….

میرے لوگوں کو چن چن کے مارا گیا

ان کا جینے کا حق ان سے چھینا گیا

ان کے گھر بار و دل کو جلایا گیا

دیس سے ان کو ان کے نکالا گیا

تیرے مذہب کی خاطر یہ ہوتا رہا

کیا عجب ہے خدایا کہ تو چپ رہا…

یہ وطن ہے کہ ذنداں کی تاریکیاں

لب پہ پابندیاں پاوں زنجیریاں

ایک اپنے نصیبوں میں سب آگیا

شہر جاناں اور اس کی یہ ہمجھولیاں

ان کی تحقیر پر دل یہ کٹتا رہا

کیا عجب ہے خدایا کہ تو چپ رہا..

The city, after all, still breathes.

Before the twilight of dawn

Till the late hours of dusk

Terror reigns

On empty roads

And bruised souls

Of beleagured city,

The war torn Quetta.

The rebellious sky

And treacherous hills

Supress the cries

And silence the screams

A thousand deaths

To the lost city

A tale unheard

Burried too deep

And doomed to bleed.

Amid the turmoil

Of decade’s suffering

And inflicted mourning

Under the blanket of grief

And limitless pain

The city after all

Still breathes.

For whom the day ends in despair?

For whom the night wanders and whirls?

For whom the day ends in despair?

For whom the birds mourn and sing?

For whom the empty edifices scream?

For whom the city weeps silently?

For whom the sky fades in anguish?

//

What keeps them awake

In the darkest of nights

From shuting the eyes

From letting the mind

and heart asleep?

//

In whose parting

The stars ignite?

For whose glimpse

The moon beseech to shine bright?

For whom

The silence

Remain silent?

//

For whom?

The wretched night wanders and whirls?

For whom the day ends in despair?

//

The cursed tranquility

Of the morning breeze

The doomed silence

Of the night speaks

//

The haunted tales

Of missing daughters

From nameless cities

To well known streets

For what crimes our daughters are killed?

For them the night wanders and whirls!

For them the day ends in despair!

#poem #wordcraft #words #abductions #honour

Kingdom of infidelity 

(Engraved upon the heart is the love of my country that neither hatred nor prejudice can supersede. It might be overshadowed for some reason but it is always there. But that doesnt mean i should pretend not to have heard, not to have seen)

I live in a country of wordly gods   Kingdom of infedelity, runs by mobs

The law is sacred than the human blood
No one adheres to God’s word

The poor screams their heart aloud
The deafening silence of the rich around

Mercy for the ones who kill mercilessly
Forgiven forgotten their crimes ultimately

The law is the air the murderers breathe
Their refuge shelter protector underneath

Terrorists roam free of fear
Empowered and strengthened with special care

Where Mashals are lynched and Qandeels are killed
Where darkness prevails and graves are build

Where Salam is forsaken where Qadri is glorified
Where Zia is alive and edhi has died

I live in a country of spiteful preachers
Wordly gods and the worst creatures 

#poem #poetry #wordcraft 

بے شرم کہیں کی

Originally shared with humsub.com.pk

کچھ دن پہلے ماہرہ کی سیگریٹ کے کش لگاتی تصویر دیکھی، پہلے تو چشم نازک کو یقین کرانے میں کئی لمحے لگے۔ یہ بھلا خرد کو کیا ہوگیا ہے؟ وہ تو معصوم تھی، اسلامی روایات کی علمبردار تھی۔ زمانے کی ہوا لگی اور اس نے تو تمام حدیں ہی توڑ ڈالیں۔ ایک تو عورت ہوکے سیگریٹ پینا پھر ننگی کمر ہونا اور تو اور بھارتی لونڈے کے ساتھ؟ بہت دعا کی کہ کاش یہ تصاویر فوٹوشاپڈ ہوں مگر زندگی ماہرہ کے چہرے سے معصومیت کا لبادہ اتارنا چاہتی تھی۔ نہ اسلامی روایات کی پاسداری نہ مشرقی اصولوں پہ کاربند، ملک و قوم کا نام خاک میں ملا دیا۔

کہاں منہ چھپائیں گے اب؟ کسی نہ کام کا چھوڑا ماہرہ نے ہمیں۔ وہ تو ہماری عزت تھی! ہماری غیرت تھی! پھر یہ کام کیوں کیا؟ الغرض وہ دن قیامت صغریٰ سے کم نہ تھا۔ ہر جگہ ماتم کا ساعالم تھا۔ بہت دنوں تک طبیعت بوجھل رہی۔ کسی کام میں دل ہی نہیں لگا۔ بار بار ماہرہ کا سوٹا سامنے آجاتا تھا۔ ناجانے کن گناہوں کی سزا مل رہی ہے ہماری غیرت کو۔

دو دن پہلے ایک دوست نے بتایا کہ ڈیرہ اسماعیل کے گاؤں میں سولہ سالہ لڑکی کو سر عام کپڑے پھاڑ کے پورے گاؤں میں چلایا گیا ہے۔ سننے میں آیا ہے کہ لڑکی نے مدد کے لئے کافی در کھٹکٹائے مگر کوئی مدد کے لئے نہ آیا۔ لڑکی نے کسی گھر میں گھس کر بچانے کی کوشش کی وہاں سے بھی نکال کر لے آئے۔ پورے گاؤں نے تماشہ دیکھا تھا۔ بعض ذی شعور لمحہ بہ لمحہ وڈیو بھی بناتے رہے۔ مسلسل ایک گھنٹے چلانے کے بعد اسے چھوڑ دیا گیا۔ لڑکی کی ماں ڈھونڈتے ہوئے لڑکی تک پہنچی تو بس یہی پوچھ سکی کہ میری بیٹی کہ ساتھ کیا کیا ہے؟ جواب میں ایک غیرت مند مسلمان نے صرف مسکرانے پہ ہی اکتفا کیا۔ سننے میں یہ بھی آیا ہے کہ ذاتی دشمنی کی بنا پر بھائی کی سزا بہن کو دی گئی۔

اب ذاتی لڑائی تھی تو کوئی کیا کر سکتا ہے؟

کیوں پرائے جھگڑوں میں اپنا خون پسینہ صرف کریں؟

اور ویسے بھی یہ ان کا اپنا معاملہ ہے۔

اپنے کام سے کام رکھنا ہی عقلمندی ہےآج کے دور میں۔

مگر ماہرہ نے اچھا نہیں کیا ایسے بھلا ملک و قوم کی عزت سر عام کون روندتا ہے؟

بےشرم کہیں کی۔

نظم

سنا ہے مقتل بھی سرخرو ہے سنا ہے قاتل بھی باوضو ہے

سنا ہے اپنے وطن میں اب کہ لہو کا پیاسہ ہوا عدو ہے

وہی ہیں منصف وہی گواہ ہیں وہی ستمگر ہیں میر محفل

وہی ہیں زندان کے محافظ وہی ہیں زندہ رتوں کے قاتل

عجیب رسم و رواج ہے اب وطن میں جینا محال ہے اب

زباں بریدہ ہے آنکھ پرنم، سانس لینا دشوار ہے اب

کسے پکاریں کہاں چلائیں، کوئی خدارا ادھر بھی دیکھے

زمیں تماشہ بنی ہوئی ہے زمیں پہ بستے خدا بھی دیکھے

یہ چند آہیں ہیں اپنا زیور فقط یہ آنسو نصیب میں ہیں

یہی ملا ہے وطن سے اپنے، یہ شہر یاراں کی دولتیں ہیں

For non Urdu readers.

Suna hy maqtal bhi surkhuro hy, suna hy qatil bhi bawudhu hy

Suna hy aony watan main abky, lahu ka piyasa hua ado hy

Wohi hain munsif, wohi gawah hain wohi sitamgar hain meer e mehfil

Wohi hain zindan ky muhafiz wohi hain zinda rotu ky qatil

Ajeeb rasm o rawaj hy ab watan main jeena muhal hy ab

Zubaan bureeda hy ankh purnam, sans lena dushwar hy ab

Kisi pukarain kahan chal’lain, koi khudara idhr bhi dekhy

Zameen tamasha bani hoi hy zamee pe basty khuda bhi dekhy

Ye chand ahain hain apna zeewar, faqat ye anso naseeb main hain

Yehi mila hy watan sy apny, ye shehr e jana ki dol’tain hain

ایدھی 

(If only I knew the art of poetry, I would have written a great poem to meet the greatness of Edhi sb. )

اندھیر رتیاں مٹاتا ایدھی

سحر زمیں پہ بساتا ایدھی

اداس لمحوں کو روند کر

خوشی لبوں پہ تھا لاتا ایدھی

غریب پرور تھا بندہ ایدھی

کفیل کتنوں کا خود تھا ایدھی

پھٹا پرانا تھا جوڑا اس کا

خدا کا بندہ عجیب ایدھی

گلے لگاتا تھا ان کو ایدھی

دلوں میں ان کو بساتا ایدھی

زمانہ پھیرے ہے منہ جن سے

انہی کو اپنا بناتا ایدھی

سڑک پہ بیٹھا بھی دیکھا ایدھی

سوالی بنتا بھی دیکھا ایدھی

تپتی دھوپوں میں پیڑ جیسا

سایہ کرتا بھی دیکھا ایدھی

دکھے ہووں کی دوا تھا ایدھی

مسیحا ٹوٹے دلوں کا ایدھی

فقط یہ کہنا ہی رہ گیا ہے

محبتوں کی دعا تھا ایدھی

#poetry #poem #Urdu #Edhi #Philanthropist #Peace #love #humanity #humanityfirst 

#PeopleOfMyLand #MeryLog 

A tale of brutal murder. 

13th April, 2017. The day Mashal Khan was lynched to death in the premises of his University by an angry mob over false accusations of blasphemy. Here’s the story of a crime never committed.

Echoes a tale of brutal murder

A boy who stood and refused to surrender

Wild beasts, not a reminent of humanity

Satans in disguise reflecting insanity

Mashal, the illuminous star of the darkened world

Lynched to death, abusively hurled

Scars on the body and the soul; bruised

For the crime never committed but unjustly accused


Nothing but silence greeted the death

Clichéd moans but none out of breath

A wake up call went in vain

The alleys of Mardan mourn in pain

To put an end the henious practice

The grieving father awaits the justice

O Mahsal, O resident of the celestial land

My words for thee, for thee I stand

#NeverForget #MashalKhan #poem #words #peace #love #13-4-2017

#peopleofmyland #merylog